Ye bhi Ali, Ali tarh lajawab hain

جشن رضا میں دیکھئے کتنے ثواب ہیں
جتنی دعایں ہونگی یہاں مستجاب ہیں

مدح رضا جو کرتے ہیں و کامیاب ہیں
منکر رضا کے دیکھلو خانہ خراب ہیں

در پر رضا کے علم ہنر سب علی کے ہیں
یہ بھی علی علی کی طرح لا جواب ہیں

و دل دکھایں بیبی کا اور تم دعا کرو
راضی خدا کو کرلوگے اندھوں کے خواب ہیں

وحدانیت خدا کی کبھی دین بچا لیا
احسان انکے کون گنے بے حساب ہیں

انکی عطا کا کوئی ٹھکانہ نہیں ظہیر
رحمت کے آسمان پا یہ آفتاب ہیں

Gulshan-e-Islam main Nikhat AbuTalib ki hai

ہر کسی کے بس میں کب مدحت ابوطالب کی ہے
نیک تینت دل میں ہی الفت ابوطالب کی ہے

اس قدر ایمان سے نسبت ابوطالب کی ہے
گلشن اسلام میں نکہت ابو طالب کی ہے

آتے ہیں کل امبیا کے ساتھ میں سرکار خود
محفلے مدحت جہاں حضرت ابوطالب کی ہے

امبیا کے ساتھ میں سرکار ہی آتے نہیں
خود خوسسی طور پر شرکت ابوطالب کی ہے

موحسن اسلام کو کافر بتانے چل پڑے
خود نبی سے پیار بھی سنّت ابوطالب کی ہے

شیخ جی کو دیکھ لو یا دشمن اسلام کو
ہر گھدی چھائی ہوئی ہیبت ابوطالب کی ہے

ظل اشیرا سے چلی اور آ گیی دربار شام
جو کبھی تھکتی نہیں ہمّت ابوطالب کی ہے

جسکو ہے الفت نبی سے اور چچا سے بیر ہے
دیکھ لے پھر سوچ لے جنّت ابوطالب کی ہے

جس گھڈی کرنے کو اے قبر میں میری حساب
خود ملک دیکھا کے شرکت ابوطالب کی ہے

انتقام کربلا کے واسطے حق نے ظہیر
جو چھپا رکھی ہے وضربت ابوطالب کی ہے

Namaz-e-Marefat hai tazkera Masooma-e-Qum ka

کیا کرتا ہوں یوں بھی تذکرہ معصومہ قم کا
پیۓ مدحت سہی نوکر بنا مسسومہ قم کا

ہے ہراک لفظ میں لتفے سناۓ فاطمہ زہرہ
قصیدہ یوں بھی ہے کچھ خاص سا معصومہ قم کا

ملیگا اجر تمکو فاطمہ زہرا کا ہی لوگوں
زیارت کا شرف گر مل گیا معصومہ قم کا

جدائی بھائی کی اک پل بھی کب انکو گوارا ہے
ملا ہے کربلا سے سلسلہ معصومہ قم کا

شرف ہے مومنوں کا اور یہ معراج الفت ہے
سنا مولا رضا کی تذکرہ معصومہ قم کا

ملیگا علم حکمت انکے در پے آج بھی تمکو
یہ زندہ آج بھی ہے معجزہ معصومہ قم کا

حفاظت ہو ہر اک مومن کی اے مولا رضا شر سے
جھکاے سر کھڈا ہوں واسطہ معصومہ قم کا

جو قسمت لے گی اک بار روزے تک مجھے مہدی
گدا بنکر رہونگا میں صدا معصومہ قم کا

Zalim ne rozadar ko zarbat lagai hai

ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے
ظالم نے روزدار کو ضربت لگائی ہے

انیسویں کی صبح کا منظر عجیب تھا
مولاۓ دو جہاں کا کنبہ غریب تھا
زخمی علی ہیں رونے کو ساری خدائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

ارکانے دینے حق کو گرایا نماز میں
گھر میں خدا کے خون بہایا نماز میں
جبریل نے سنانی یہ روکر سنائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

مسجد میں خون بھ گیا شیرے اله کا
محشر بپا ہے کوفے میں فریادو اہ کا
سر پر علی کے تیغ یہ کسنے چلائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

چہرا ہے سارا خون میں تر و محمّدا
روزے میں روزدار پا کیسا ستم کیا
مولا ے دو جہاں کو ضربت لگائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

بابا کو لیکے گھر میں جو آے حسن حسین
شورے فغاں تھا زینبو کلثوم کے تھے بین
خاکے یتیمی کسنے سروں پر اڈائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

سر کوعلی کے دیکھکے حیراں طبیب ہے
ہے زندگی محال شہادت قریب ہے
ضربت شخی نے زہر میں اپنی بجھائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

روتی رہیگی مسجدو محرراب اور ازاں
لو چل بسا زمانے سے مولاے دو جہاں
بچچے ہیں بے بسی ہے پدر کی جدائی ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

ماتم بپا ہے حیدرے کررر کا ظہیر
تابوت ہے یہ شیون کے سردار کا ظہیر
لینے کو پرسا فاطمہ جنّت سے آئ ہے
ماتم ہے مرتضیٰ کا محمّد دہائی ہے

Shabe unees kya aai udasi sath layi hai

شعبے انیس کیا آیی اداسی ساتھ لائی ہے
قضا حیدر سے ملنے مسجدے کوفہ میں آی ہے

ہوئی محراب بھی رنگین مسللہ تر ہوا سارا
شخی نے سجداۓ خالق میں و ضربت لگائی ہے

کیا خیبر شکن پر وار ہے سجدے میں ظالم نے
زہر آلودہ تھی تلوار جو حیدر نے کھایی ہے

وصی حق کی مسجد میں شہادت ہو گی لوگوں
سنانی روکے یہ جبریل نے سبکو سنائی ہے

کیا کرتے تھے حیدر صبر کی تلقین بیٹوں کو
حسن کہتے تھے سر کو پیٹ کے نانا دہائی ہے

کہا حسنین سے حیدر نے سبکو بھیج دو واپس
صداے سانے زہرہ مجھے پردرد آی ہے

کیا یہ کسنے کاری وار ہے بابا باتیں تو
ذرا یہ زخم تو دیکھیں جبیں تک تیغ آی ہے

یہاں پرسے کو آی ہے نبی کی لاڈلی بیٹی
ظہیرغمزدہ جب سے سیف ماتم بچھایی ہے

Chali hai Sulh Hasan Zulfeqaar Ki Soorat

وہیں ملیگی ہراک افتخار کی صورت
ملک جہاں پا کھڈے ہوں قطار کی صورت

ہے نیم ماہ مبارک حسن کی آمد ہے
کھلی ہوئی ہے ہر اک روضدار کی صورت

کھلا جو گلشانے کوثر میں آج پہلا پھول
قران دیکھ رہا ہے بہار کی صورت

نبی کے کاندھ پا حسنین زلف ہاتھوں میں
زمانہ دیکھے ذرا لاڈ پیار کی صورت

امیر شام کی کھیتی اجاڈ دی اسنے
چلی ہے صلح حسن زلفیرار کی صورت

بدی صفائی سے ظالم کا سر اتارا ہے
قلم کی نوک چلی تیز دھار کی صورت

کوئی بلا بھی تو کوسوں نظر نہیں آی
پڑھی جو ناد علی اک حصار کی صورت

ہے دل میں بغزے علی اور نماز روزے بھی
ملینگے سارے عمل تمکو خار کی صورت

دوائی اسکی فقط ہے علی علی کہنا
چڈھا جو بغزے علی ہے بخار کی صورت

نبی کی بیٹی نے رب سے دعایں مانگی ہیں
زمانہ دیکھیے ذرا ہمسے پیار کی صورت

بچھا کے فرشے ازمت کرو ریاکاری
کیوں توڑتے ہو بھلا اعتبار کی صورت

دعا کرو کے حکومت میں اے ظہیر تیرا
شمار مولا کریں جا نثار کی صورت

Inhen Husain bhi Apna Imam khete hain

بصد خلوص بصد احترام کہتے ہیں
حسن کو بادشاہ خاصو عام کہتے ہیں

تمام عظمت انکا طواف کرتی ہیں
انہیں حسین بھی اپنا امام کہتے ہیں


غدیر خم کا سبھی سے پیام کہتے ہیں
نبی کے بعد علی کو امام کہتے ہیں

علی کے بعد حسن کا مقام آتا ہے
انہیں حسین بھی اپنا امام کہتے ہیں

Hasan ka Jashn hai ehle wila main

جو لتفے خاص حمدے کبریا میں
ہے و ہی لتفو کرم انکی سنا میں

مہک جنّت کی پھیلی ہے فضا میں
حسن کا جشن ہے اہل ولا میں

میاں صدقہ بتیگا پنجتن کا
حسن کا جشن ہے اہل ولا میں

نبی کو مل گیی کوثر کی دولت
حسن کا جشن ہے اہل ولا میں

در زہرا پا یہ جبریل بولے
ہے جلوہ مصطفیٰ کا مجتبیٰ میں

ردا میں نور کوثر ضوفشاں ہے
نبی کے دونو بیٹے ہیں کیسا میں

شرایط پر حسن کی صلح ہونا
ستم کا سر ہے یہ تشتے تلا میں

نہ کرنا جنگ حسن کا صلح کرنا
پتا چل جائے گا کربوبلا میں

ہمیں جنّت ملیگی لازمی ہے
تردّد ہی نہیں انکی عطا میں

Bazu-e-Haider ki taqat khama-e-Shabbar main hai (Mohd Mehdi – Mehdi)

ہر فضیلت کو شرف بس کھانا حیدرمیں ہے
خود نبی پاک کو راحت ملی اس گھر میں ہے

جو رکھ مومن کھلا دے اور دل باطل ہلا
آج بھی اک ایسی طاقت نعرا حیدر میں ہے

آمد شبّر سے دیکھو رحمتوں ہے نوزول
آج مسجد مصطفیٰ بھی نور کے محور میں ہے

کون ابتر ہو گیا ہے کسکی ہے نسلے کثیر
کس پا یہ ظالم تبررا سورہ کوثر میں ہے

یہ سلہے شبّر ہے یا سلہے رسول الله ہے
دیکھ کریہ خود امیرے شام بھی چکّر میں ہے

مینے رکھا تھا سجاکر پرچمے عبّاس کو
پنجتن کا آنا جانا ٹیب سے میرے گھر میں ہیں

عقل کے اندھے چلے قتلے رسول الله کو
یہ پتا نہ کر سکے کے کون اس بستر میں ہے

دیکھ کر لفظوں کی تیزی خود یہ بولی ذولفقار
بازو حیدر کی طاقت خامہ شبّر میں ہے

یہ سعادت ہے تیری جو نوکری مہدی ملی
اب تو تیرا نام بھی شاہ کے نوکر میں ہے